پیر صاحب کے کہنے پر دادا کی صحت یابی کیلئے 6 ماہ کی پوتی کے ساتھ لرزہ خیز اقدام سن کر ہر کوئی لرز جائے

بھارت میں ایسے واقعات کی بھرمار ہے اور شرمندگی اور افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ اس میں ہمارے مسلمان بھی شامل ہیں۔

تفصیلات کے مطابق دل دہلا دینے والا واقعہ جنوبی بھارتی ریاست تامل ناڈو میں پیش آیا جہاں دادا کی صحت یابی کیلئے 6 ماہ کی بچی کو پانی میں ڈبو کر مار دیا گیا۔پو لیس کو مقامی تحصیلدار نے اس کی اطلاع دی۔

بھارتی میڈیا کے مطابق 32 سالہ نصیرالدین کی شادی شالہا سے ہوئی تھی جن سے ایک بیٹی پیدا ہوئی۔ نصیر الدین کے چچا عصرالدین حال ہی میں بیرون ملک سے آئے تھے۔

عصرالدین کی طبیعت خراب رہنے لگی تو ان کی اہلیہ نے ایک پیر صاحب سے رابطہ کیا اور پیر صاحب نے یہ مشورہ دیا کہ کسی ایسے بچے کو قتل کیا جائے جس کا خون زمین پر نہ گرے تو تمھاراشوہر ٹھیک ہو جائے گا

رپورٹس کے مطابق آدھی رات کو شرمیلا شالہا کے گھر میں داخل ہوئیں اور ماں کے پہلو میں سو رہی 6 ماہ کی بچی کو اغوا کرلیا۔ شالہا کی جب آنکھ کھُلی تو بیٹی کو نہ پاکر خوفزدہ ہوگئیں۔ تلاش کرتے کرتے جب وہ باہر آئیں تو شرمیلا ملیں۔ شرمیلا انہیں لیکر گھر کے اس حصے میں آئیں جہاں انہوں نے بچی کو پانی کی ٹنکی میں پہلے ہی ڈبو کر مار دیا تھا

شالہا کے بیان کے مطابق بیٹی کو مارنے کے بعد شرمیلا اسے دفن کرنے کیلئے ان پر دباؤ ڈالتی رہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں